وینا ملک کا ایک اور گولمال

|
مارچ 27, 2017


Facebooktwittergoogle_pluslinkedin
وینا ملک نے میڈیا میں خلع فائل کی اور پھر لمبے چوڑے الزامات اپنے شوہر پرلگائے ، یہ منظر بالکل ایسا تھا جیسے محلے میں بیچاری خالہ گھر گھر جا کر اپنا مسئلہ سب کو بتاتی ہیں۔ محلے کی خالہ کی طرح ہی وینا ملک بھی پروگرام میں جا کر اپنا رونا روتی رہیں۔ کبھی وسیم بادامی کے پروگرام میں اس عوامی مسئلے پر علماء کو بلوا لیا تو کبھی مدرسے میں جا کر بریکنگ نیوز دے دی اور کبھی تو خود ساختہ عالم عامر لیاقت کے پروگرام میں سہیلیوں کی طرح شوہر کی غیبت کی۔
مگر یہ سب گولمال نکلا اور کچھ ہی دنوں بعد وینا ملک نے اپنے شوہر اسد بشیر خان خٹک کے ساتھ گانا "یہ تیرا پاکستان ہے، یہ میرا پاکستان ہے" گایا اور موسیقی کی دنیا میں بھی قدم رکھ دیا۔ اداکاری میں چل نہ سکیں، ماڈلنگ کے لائق نہیں اور اب وینا ملک گلوکاری میں بھی منہ کی کھانے کو تیار ہیں۔ ان "لو برڈز" کے لیے سوال یہ بنتا ہے کہ جب طلاق لینی نہیں ہوتی تو ڈرامہ کیوں کرتے ہو۔
اسد خٹک کو چاہیئے کہ آئندہ گانا گانے کی ناکام کوشش نہ کریں۔ گانا گانا ہر کسی کے بس کی بات نہیں ہے۔ اور کم از کم گانا گا بھی رہے ہیں تو شاعری اچھی ہونی چاہیئے۔ ملی نغمے میں بھی قافیہ کا خیال نہیں ، شاعری کا وزن تو بس گلوکار کی مرضی پر چل رہا ہے۔ "جنون" کا قافیہ "شاہین" کب سے ہو گیا؟ اگلے شعر میں اگر "تصویر " اور "زنجیر" قافیے ہیں تو "ہے" اور "یہ" ردیف کیسے ہوسکتے ہیں۔
جو کام انسان نہیں کرسکتا ہو ، اسے کرنے کی کوشش بھی نہیں کرنی چاہیئے۔ وینا ملک ٹی وی پر صرف اسکینڈل کے لیے ہی آسکتی ہیں ورنہ ٹی وی کے کسی بھی شعبے کے لائق نہیں ،چاہے اداکاری ہو، ماڈلنگ یا گلوکاری۔
اپنی رائے کا اظہار کریں

. .

Social media & sharing icons powered by UltimatelySocial