کوک اسٹوڈیو کا ایک اور ناکام تجربہ

|
اگست 8, 2017


Facebooktwittergoogle_pluslinkedin
دو بار قومی ترانہ سن کر جذبہ حب الوطنی بیدار ہونے کے بجائے قومی ترانہ پڑھنے والوں کے لیے منفی الفاظ زبان پر لانے کا جذبہ بیدار ہوگیا۔۔۔ پہلی دفعہ شفقت امانت علی نے پاک بھارت ٹی 20 میچ سے پہلے غلط قومی ترانہ پڑھ کر عوام کے دل توڑے تھے اور اب دوسری بار اس کا سہرا کوک اسٹوڈیو سیزن 10کے سر سجتا ہے۔
یومِ آزادی سے پہلے کوک اسٹوڈیو کو چمکانے کے لیے حب الوطنی کا استعمال کرنے سے زیادہ بہتراور کیا ہوسکتا تھا، اسی لیے اپنے تمام ہی گلوکار اور ساز و سامان کے ساتھ انھوں نے قومی ترانہ نئے سرے سے کمپوز کرنے کی ناکام کوشش کی۔ یہ کوک اسٹوڈیو کی شان ہے کہ مختلف گانوں، دھنوں اور نغموں کو'کہیں کا نہیں چھوڑنے 'میں ان کا کوئی ثانی نہیں۔ قومی ترانے کا بھی کچھ ایسا ہی حال کیا اور عوام کے جذبہ حب الوطنی کو ٹھیس پہنچائی۔
جنھیں موسیقی کے حوالے سے کم سے کم بھی معلوم ہے انھیں یہ قومی ترانہ ، اصل قومی ترانے کی توہین محسوس ہوا۔ باقی ایسے افراد کی بھی کمی نہیں جو کوک اسٹوڈیو کی طرف سے آنے والے اشتہار پر بھی "واہ واہ" کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ کیا اشتہار بنایا ہے۔
کوک اسٹوڈیو نے اس سے پہلے پاکستان کے مشہور ملی نغمے "سوہنی دھرتی" کو پوری کوششوں سے خراب کیا تھا مگر قوم نے اسے برداشت کیا ۔ لیکن اب بات قومی ترانے پر آ گئی ہے۔۔۔ 'جَنتا' معاف نہیں کرے گی!!!
اپنی رائے کا اظہار کریں

. .

Social media & sharing icons powered by UltimatelySocial