No Image
Facebooktwittergoogle_pluslinkedin

رودادِ سالے

|
جولائی 28, 2017


Facebooktwittergoogle_pluslinkedin
اسلام آباد (رپورٹ: سالے کافر) ملک میں سوگ کی فضاء ، ہر طرف دکھ کے بادل چھا گئے کیونکہ پاکستان کا شیر جو وزیر اعظم بننے کا اہل تھا ہی نہیں، آج نا اہل قرار دے دیا گیا ہے۔ 273 دنوں میں پانامہ کیس کا فیصلہ آیا ، کاش کچھ دن اور رک جاتا تو 2018 کے الیکشن ہی آجاتے۔ نواز شروف تو وہ ہستی تھے کہ جہاں جاتے وہاں رحمت کے بادل چھاجاتے، چڑیا چہچہانے لگتی فضائیں مسکرانے لگتی، دل دھڑکنے لگتے اور کچھ تو ہونے لگتا تھا۔۔۔
یہ پڑھیں: صرف نواز شریف ہی ہیں جو یہ جرات رکھتے تھے
ستم تو یہ ہے کہ صرف والد محترم کو نااہل نہیں کیا گیا بلکہ ان کے نیک، فرمانبردار، تابعدار شریف ابنِ شریف بیٹی بیٹوں اور دماد کے خلاف بھی کیس نیب بھجوانے کا فیصلہ کیا ہے۔ ایسا کیسے ممکن ہے کہ کوئی نوجوان شریف جو اپنی بہن کی اجازت کے بغیر گھر سے نکلنے کی ہمت نہیں کرتا اور مونگ پھلی کا دانہ صحیح سے چبا کر کھاتا ہے ، ایسا شخص بدعنوانی کرے۔
دوسری طرف انکی بیٹی جو جانتی ہے کہ ہم حکمران خاندان سے ہیں ۔جیسے لوگ خاندانی قصائی، میراثی، اور دیگر پیشے اپناتے ہیں ایسے ہی ہم خاندانی حکمران ہیں اور ہمارا کام ہی آئینی طور ملک لوٹنا ہے ، جس لڑکی کو اس بات کا پتا ہووہ بھلا یہ پانامہ لیکس میں حصہ لے سکتی ہے ؟
یہ سارا مال جو پانامہ میں نکلا ہے یہ کوئی کرپشن تھوڑی ہے ، یہ سب تو تحفے ہیں جو خاندانی حکمرانوں کو عوام کی طرف سے ہمیشہ ملتا آیا ہے۔ آخر جو نااہل ہوئے ہیں وہ عوام کے لیے کیا کچھ نہیں کرتے، روڈ بناتے ہیں، میٹرو لاتے ہیں اور ترقی کے خواب دکھاتے ہیں، اس میں تھوڑا بہت غلطی سے رکھ لیا تو کیا ہوا۔
اب وزیر اعظم کو نا اہل کردیا گیا ہے تب بھی کوئی خاص گھبرانے کی بات نہیں ہے ۔ الیکشن میں کچھ ہی عرصہ رہ گیا ہے، تب تک کوئی اور ن لیگ کا ہی وزیر اعظم آجائے گا۔ ایک بار حکومت کی مدت پوری ہوجائے تو پھر پاکستان میں کون رہتا ہے؟؟
اپنی رائے کا اظہار کریں

. .

Social media & sharing icons powered by UltimatelySocial