No Image
Facebooktwittergoogle_pluslinkedin

روبن گھوش کی یاد میں

|
مارچ 8, 2016


Facebooktwittergoogle_pluslinkedin
فروری 13 کو روبن گھوش کے انتقال کی خبر نے ان کے ہم عصر وں سمیت بہت سے دلوں کو اداس کر دیا۔ پلے بیک سنگر اے نیر کہتے ہیں روبن بھائی صرف موسیقار نہیں، باپ تھے۔ بہت مشکل سے اپنے جذبات پر قابو پاتے ہوئے انھوں نے کہا
روبن بھائی کی موت سے پاکستان میں سنگیت مرگیا، جب سے وہ گئے ہیں میں سوگ میں ہو۔وہ ایک شریف آدمی تھے جو صرف اپنی بیوی سے ہی محبت نہیں کرتے تھے بلکہ ہماری بھی بہت عزت کرتے تھے۔ میں نے ان کے ساتھ اور شبنم باجی کے ساتھ کافی وقت گزارا ہے،وہ میرے لئے میری فیملی کی طرح تھے۔
روبن گھوش نے پاکستان میں بہت سے گلوکاروں کو متعارف کرایا ۔ ان میں سے ایک پاپ گلوکار محمد علی شہکی بھی تھے جن کے مطابق روبن گھوش ایک بہترین انسان تھے۔
میں نے ان کے ساتھ ایک پلے بیک گلوکار کے طور پر پہلی مرتبہ 1978 میں کام کیا۔ میں ان کی شخصیت سے بہت متاثر ہوا تھا، انہوں نے جس طرح مجھے یہ سماء پیار کا ( فلم: انمول محبت) گانے کے لئےمدد کی تھی ، اس دن میری زندگی کا ایک بہت بڑا خواب پورا ہوگیا تھا۔ میں ان کے انتقال کی خبرسے بہت دکھی ہوں۔ میں نے ان سےملاقات کا اور ان کے ساتھ ان کی اور دھنوں پر گانے گانے کاارادہ کیا ہوا تھا۔ وہ مجھ سے ہمیشہ کہتے تھے کہ میں ایک پاپ سنگر نہیں، پلے بیک سنگر ہوں اور میں اس کے لئے ان کا شکر گزار ہوں۔
روبن گھوش پچھلی پانچ دہائیوں کے دوران بہترین موسیقاروں میں سے ایک تھے۔ سہیل رعنا اور نثار بزمی کے ساتھ وہ ان نایاب موسیقاروں سے تعلق رکھنے والے شخص تھے جو تعدادسے زیادہ معیار کو اہمیت دیتے تھے۔روبن گھوش نے اپنا کیریئر مشرقی پاکستان سے 60 کی دہائی میں شروع کیا اور سنگیت کارمصلح الدین کے اسسٹنٹ کے طور پر کام کیا ، کچھ سالوں بعد انہوں نے اپنا انفرادی کیرئیر چندا اور تلاش کے ساتھ شروع کیا۔ احمد رشدی سے لے کر مہدی حسن تک، مسعود رانا سے اداکار ندیم تک، اخلاق احمد سے اے نیر تک، فردوسی بیگم سے ناہید نیازی تک، مالا سے رونا لیلیٰ تک اور پھر نیرہ نور اور مہناز، انہوں نے بڑے بڑے پلے بیک سنگرز کو اپنے گانوں کے لئے استعمال کیا۔ ماسوائے نور جہاں اورناہید اختر کے جنہوں نے دیگر موسیقاروں کے ساتھ تو گانا گایا، روبن گھوش کے ساتھ نہیں۔معروف اداکار اور ہدایت کار جاوید شیخ کہتے ہیں کہ انہوں نے روبن گھوش کے ساتھ کام نہیں کیا جسکا انہیں افسوس رہے گا۔
جب میں نے اپنا فلمی کیریئر1983 میں دوبارہ شروع کیا تو روبن گھوش اور شبنم کے ساتھ بہت وقت گزارتا تھا، روبن بھائی ہمیشہ فلموں کے انتخاب میں میری مدد کیا کرتے تھے۔ جب میری دو ابتدائی فلمیں کبھی الوداع نہ کہنااور بوبی ہٹ ہوئیں تو میرا امجد بوبی کے ساتھ ایک اچھا تعلق بن گیا تھا۔ لیکن جب میں نے 2002 میں یہ دل آپکا ہوا بنانے کا ارادہ کیا، تو میں روبن گھوش کو موسیقار کے طور پر منتخب کرنا چاہتا تھا مگر ایسا ہو نہیں پایا۔ مجھ سمیت ہر کسی کے پاس ان کے گانے آئی پیڈ یا ایم پی تھری پلیئر پر محفوظ ہیں اور آج بھی ان میں ایسی تازگی ہے جیسی ریلیز کے وقت تھی۔
ہدایت کار شہزادرفیق بیس سال پہلےاپنی فلم گھونگھٹ مین روبن گھوش کی خدمات حاصل کرنے والے آخری شخص تھے۔ ان کی نئی فلم سلیوٹ مئی میں ریلیز ہونے کے لئے تیار ہے اور وہ اپنی اس فلم میں فلم نہیں ابھی نہیں کے گانے میرا کھلونا کو استعمال کر کے روبن گھوش کو خراج تحسین پیش کیا ہے۔ روبن گھوش اپنی زندگی کے دوران ایک لیجنڈ تھے، بہت سے لوگوں کو نہیں معلوم کہ وزیر اعظم نواز شریف ان کے بہت بڑے مداح ہیں۔ جب دادا(ان کے دوست انہیں دادا کہا کرتے تھے) اخلاق احمد کی زندگی کے آخری دنوں میں ان کے پاس مالی مدد مانگنے گئے تو انہوں نے اپنی خوشی سے مدد کی۔ اخلاق احمدکے آخری الفاظ روبن گھوش کی تعریف میں تھے وہ مانتے تھے کے ان کے لئے سب سے زیادہ مدردروبن گھوش تھے۔
اپنی رائے کا اظہار کریں

. .

Social media & sharing icons powered by UltimatelySocial