پی سی بی ظلمی

|
مارچ 4, 2017


Facebooktwittergoogle_pluslinkedin
سونم کپور نے ایک لمحے کے لیے لازمی سوچا ہوگا " میں کروں تو کیریکٹر ڈھیلا ہے"، جب انہیں دبئی میں کرکٹ اسٹیڈیم کے گیٹ سے ہی واپس جانا پڑا۔  سونم کپور پی ایس ایل میں پشاور زلمی ٹیم کے مالک جاوید آفریدی کے بلانے پر پشاور زلمی کی حوصلہ افزائی کرنے دبئی آئی تھیں۔ پہلے تو انہیں گیٹ پر روکا گیا اور بعد میں پی سی بی نے انہیں واپس بھیج دیا اور  باقی ٹیموں سے کہا کہ کسی بھی بھارتی اداکار یا اداکارہ کو بلانے سے پہلے پی سی بی کو بتانا لازمی ہوگا۔
اب سوال یہ بنتا ہے کہ پی ایس ایل میں تو غیر ملکی بھی کھیل رہے ہیں اور کونسا پی ایس ایل پاکستان میں ہو رہا ہے جہاں کسی کو آنے سے پہلے پی سی بی سے اجازت لینی ہوگی۔ پی ایس ایل جن اشتہارات پر پل رہا ہے، چل رہا ہے، ان میں بھی تو بھارتی فنکار موجود ہیں۔ تو پھر اشتہار لینا ہی چھوڑ ہی دیں؟ فائنل دیکھنے کے لیے سابقہ" مس کردستان" کو دعوت دی گئی ہے، وہ کیا خالص پاکستانی ہیں؟
پشاور زلمی کو نرگس فخری سپورٹ کر چکی ہیں اور اپنی ایک ویڈیو میں نرگس فخری نے ٹیم کے کھلاڑیوں کو سراہا۔ یہ اچھا ہے کہ پی سی بی نے اس پر یہ نہیں کہا کہ " پاکستان کی کرکٹ لیگ کا غیر پاکستانی کیوں ساتھ دے رہے ہیں، جائیں ہم نہیں کھیل رہے۔" ان سے کوئی امید نہیں ، جب یہ ایک اداکارہ کو اسٹیڈیم کے گیٹ سے واپس بھیج سکتے ہیں تو کچھ بھی کر سکتے ہیں۔
پچھلے سال چتراگدا سنگھ پی ایس ایل میں اسلام آباد کو سپورٹ کرنے آچکی ہیں ۔ یعنی یہ بھی کوئی نئی بات نہیں کہ بھارتی فنکار پی ایس ایل میں کسی ٹیم کو سپورٹ کرنے آئے ہوں۔اگر روکنا تھا پچھلے سال  چتراگدا سنگھ کو بھی روکتے.
لگتا ہے پاکستانی بھی اب وہی کریں گے جو بھارتی کرتے آئے ہیں۔ ہم نے دیکھا ہے کہ بھارتیوں نے پاکستانی اداکاروں کو ہمیشہ نشانہ بنایا  اور بھارت  میں آنے سے روکنے کے لئے ان پر پابندی تک لگائی، دھمکیاں دیں اور ان کی فلموں کو چلنے سے بھی روکا۔ اب پی سی بی نے بھی سونم کپور کو اسٹیڈیم سے واپس بھیج کر ایسا ہی تاثر دیا ہے۔ اگر کسی ٹیم نے اپنی سپورٹ کے لیے بھارتی اداکارہ کو بلا لیا تھا اور وہ آ بھی گئی تھیں تو مہمان نوازی کرنا تو پاکستان کی تہذیب میں شامل ہے۔
اپنی رائے کا اظہار کریں

. .

Social media & sharing icons powered by UltimatelySocial